مجھ سے

مجھ سے

کہنے کو ہے رفاقت مجھ سے
پس پردہ ہے عداوت مجھ سے
یہ کھیل کھیلناکسی اور سے دوست
چھپ نہ سکے گی تیری بناوٹ مجھ سے
عیبوں میں مرے سر فہرست یہ رہا
ہوتی نہیں جذبوں میں ملاوٹ مجھے
نہ پوچھو کیا چھن گیا ہے میرا
اب تلک نہیں جاتی یہ ندامت مجھ سے

Mubashra Mahmood